Sale

Missiles of Words

Buying Options

Frame material: Beechwood
Frame type:  Magnetic, hanging. 
Print type:  UD printing / eco solvent (washable)
Print material:
 Cotton canvas
Size:  A3

What's in the box?  
1. Wooden frame (Top and bottom, each consisting of two wooden pieces and 3 pairs of magnets for maximum strength)
2. Printed Canvas
Note: Canvas may be wiped clean or hand-washed. Gentle handwashing doesn't affect the print quality. 

Story:

Abu Juraiy Jabir bin Sulaim (May Allah be pleased with him) reported:
I noticed a man whose opinion was followed by everyone, and no one acted contrary to what he said. I asked who he was, and I was informed that he was the Messenger of Allah (ﷺ). I said to him twice: "Alaikas- salam ya Rasul-Allah (May Allah render you safe)." He said, "Do not say: 'Alaikas-salamu.' This is the salutation to the dead (during the time of Jahiliyyah). Say, instead: 'As-salamu 'alaika (May Allah render you safe)."' I asked: "Are you the Messenger of Allah?" He replied, "(Yes) I am the Messenger of Allah, The One Who (Allah) will remove your affliction when you are in trouble and call upon Him, Who will cause food to grow for you when you are famine-stricken and call upon Him, and Who will restore to you your lost riding animal in the desert when you call upon Him." I said to him: "Give me instructions (to act upon)." He (ﷺ) said, "Do not abuse anyone." (Since then I have never abused anyone, neither a freeman, nor a slave, nor a camel, nor a sheep). He (ﷺ) continued, "Do not hold in contempt even an insignificant act of goodness because even talking to your brother with a cheerful face is an act of goodness. Hold up your lower garment half way to the leg, and at least above the ankles; for trailing it is arrogance, and Allah dislikes pride. And if a man abuses you and taunts you with what (of your weakness) he knows about you, do not insult him by what (of his weakness) you know about him because then he alone will assume the evil consequences of that abuse."

[ Sunan Abi Dawud 4084 and At-Tirmidhi].
وعن أبى جرى جابر بن سليم رضى الله عنه قال‏:‏ رأيت رجلا يصدر الناس عن رأيه ؛ لا يقول شيئاً إلا صدروا عنه؛ قلت‏:‏ من هذا قالوا‏:‏ رسول الله صلى الله عليه وسلم‏.‏قلت‏:‏ عليك السلام يا رسول الله - مرتين- قال‏:‏ ‏"‏لا تقل عليك السلام، عليك السلام تحية الموتى -قلت ‏:‏ السلام عليك‏"‏ قال‏:‏ قلت‏:‏ أنت رسول الله ‏؟‏ قال‏:‏ ‏"‏أنا رسول الله إذا أصابك ضر فدعوته كشفه عنك،وإذا أصابك عام سنة فدعوته أنبتها لك، وإذا كنت بأرض قفر أو فلاة، فضلت راحلتك، فدعوته ردها عليك‏"‏ قال‏:‏ قلت‏:‏ اعهد إلى‏.‏ قال‏:‏ ‏"‏لا تسبن أحداً‏"‏ قال‏:‏ فما سببت بعده حراً، ولا عبداً، ولا بعيراً، ولا شاة ‏"‏ولا تحقرن من المعروف شيئاً، وأن تكلم أخاك وأنت منبسط إليه وجهك؛ إن ذلك من المعروف‏.‏ وارفع إزارك إلى نصف الساق، فإن أبيت فإلى الكعبين، وإياك وإسبال الإزار فإنها من المخيلة وإن الله لا يحب المخيلة، وإن امرؤ شتمك وعيرك، بما يعلم فيك فلا تعيره بما تعلم فيه، فإنما وبال ذلك عليه‏"‏.‏((رواه أبو داود والترمذي))

سیدنا ابوجری جابر بن سلیم رضی اللہ عنہ کہتے ہیں: میں نے ایک ایسے آدمی کو دیکھا کہ لوگ اس کی رائے کے سامنے سر تسلیم خم کر دیتے تھے، وہ جو کچھ بھی کہتا، وہ اسے تسلیم کر لیتے۔ میں نے پوچھا: یہ آدمی کون ہے؟ انہوں نے کہا: یہ اللہ کے رسول ہیں۔ میں نے دو دفعہ کہا: اے اللہ کے رسول!  «عليك السلام»  آپ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے فرمایا    «عليك السلام»  مت کہہ، یہ تو مُردوں کا سلام ہے،  (زندوں کو سلام دینے کے لیے   «السلام عليكم»  کہا کر۔  میں نے کہا: کیا آپ اللہ کے رسول ہیں؟ آپ   صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا:   میں اس اللہ کا رسول ہوں کہ اگر تجھے کوئی تکلیف پہنچھے اور تو اسے پکارے تو وہ دور کر دے گا، اگر تو قحط سالی میں مبتلا ہو جائے اور اس سے دعا کرے تو وہ زمین سے سبزہ اگا دے گا اور اگر تو کسی بےآب و گیاہ اور بیابان جنگل میں ہو اور تیری سواری گم ہو جائے اور تو اسے پکارے تو وہ واپس لوٹا دے گا۔  میں نے کہا: مجھے کوئی وصیت ہی فرما دیں۔ آپ   صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا:   کسی کو گالی نہ دینا، کسی نیکی کو حقیر و معمولی مت سمجھنا، اگرچہ وہ اپنے بھائی کے ساتھ خندہ پیشانی کے ساتھ کلام کرنے کی صورت میں ہو، اپنی چادر کو پنڈلی کے نصف تک بلند رکھنا، اگر ایسا نہ کرے تو ٹخنوں تک رکھ لینا، ٹخنوں سے نیچے چادر  (اور شلوار وغیرہ)  لٹکانے سے بچنا، کیونکہ ایسا کرنا غرور  (اور تکبّر)  ہے اور اللہ تعالیٰ غرور کو پسند نہیں کرتا۔ اگر کوئی آدمی تیرے کسی برے فعل، جسے وہ جانتا ہے، کی وجہ سے تجھے عار دلائے، تو تو اسے اس کا عیب، جسے تو جانتا ہے، کی بنا پر طعنہ نہ دینا، کیونکہ اس چیز کا وبال اسی پر ہو گا۔  ایک روایت میں ان الفاظ کی زیادتی بھی ہے کہ آپ   صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا:   کسی کو گالی نہ دینا ، تو ابوجری نے کہا: میں نے اس وصیت کے بعد کسی آزاد یا غلام بلکہ اونٹ یا بکری تک کو برا بھلا نہیں کہا-
Subscribe